بے روزگاروں کو روزگار فراہم کرنے کی انجم جسیم کی یہ پہل قا بل تعریف بھی ہے اور تقلید بھی

جسیم بتاتے ہیں انہوں نے 2 لاکھ ماسک تقسیم کیا

 دربھنگہ : (ایشیا ٹائمز نیوز ڈیسک   سال 2019  میں کورونا وبا دیکھتے ہی دیکھتے ساری دنیا کو اپنے زد میں لیے لیا ۔ اس وبا سے وطنِ عزیز بھارت بھی بچ نہیں سکا ، کرونا  جنگل میں آگ کی مانند یہاں بھی  پھیل گیا اور ہزاروں انسان کو اِس ہلاکت خیز وبا نے ہمیشہ کے لئے موت کی نیند سلا دی ۔

وبا کے تیزی سے پھیلنے کی وجہ سے مرکزکی بی جے پی  حکومت نے پورے ملک میں جلد باز  میں لاك ڈاون نافذ کر دیا ، نتیجہ یہ ہوا کہ کارخانوں میں کام کرنے والے ہزاروں مزدور اچانک بیروزگار ہو گئے اور فاقہ کشی کی نوبت آگئی ، حالت سے پریشان مزدور واپس اپنے گھروں کا رخ کرنے لگے ۔ 

اب یہ لوگ گھر پہونچ  چکے تھے اور اب ان کے پاس کوئی کام کاج بھی  نہیں تھا،  گھر میں آمدنی کی کمی کے باعث فاقہ کشی کی نوبت پہلے ہی  آپڑی تھی ۔


ایسے میں نوجوان دربھنگہ کا ایک نوجوان انجم جسیم  اپنے چند ساتھیوں کے ساتھ  حالات کا مقابلہ کرنے کی کمر کسی اپنے دوستوں کے ساتھ ملکر ماسک بنوا کرعوام میں تقسیم کرنے کا کام شرو ع کیا ۔ جسیم کی اس پہل سے لوگوں کو کرونا جیسی مہلک بیماری سے تحفظ تو ملا ہی اسی بہانے سلائی کا کام جاننے والے درجنوں  بے روزگار کاریگر اور مزدوروں کو روزگار  ملا اور ان کے اہل خانہ کو فاقہ کشی سے راحت ملی ۔

جسیم  بتاتے ہیں کہ ا نہوں نے  2 لاکھ ماسک بنوائے جسکی  لاگت  فی ماسک 3 روپئے آئی اس حساب سے ا نہوں نے  6 لاکھ روپئے کے مساک تقسیم کیے  ۔

ایک  ایسے وقت میں جب حکومت نے بھی ہاتھ کھڑے کر دیے تھے مزدور طبقہ بے یار رو مددگاربھٹک رہا تھا جسیم نے ان کو جینے کی  نئی راہ سجھائی ۔

 جسیم کہتے ہیں کہ انہوں نے یہ کام کوئی نام و نمود کے لئے نہیں بلکہ اللہ کے رضا کے لیے کیا ہے ، اور عوام سے اپیل کی ہے آپ بھی اپنے شہر ، قصبہ ، گاوں  میں اسی طرح  بے روزگار مزدور لوگوں کی مدد کریں ان کو روزگار کے موقع فراہم کروائیں انشاء اللہ  آپکی دنیا و آخرت دونوں سنور جائے گی ۔

 


0 comments

Leave a Reply