26/09/2017


ننھی سمیہ کا سفر نامہ : جب ابو نے کہا'چلو آج گھومنے چلتے ہیں '

جب ہماری چھٹیاں پڑی , تو ہم لو گو ں کو بہت دنو ں سے گھو منے کا من کر رہا تھا ۔ ابو بہت دنو ں سے لے نہیں جا رہے تھے۔ ہم لوگ جب ابو سے کہتے تو ان کی 'پریس کا نفر نس'  بیچ میں آ جاتی ۔  ایک دن ہم سب کھانا کھا رہے تھے اور ابو کمپیوٹر پر کام کر رہے تھے کہ اچانک ابو نے امی سے کہا کہ چلو آج گھومنے چلتے ہیں لیکن اس دن مو سم ٹھیک نہیں تھا۔

ایسا لگ رہا تھا کہ بس ابھی  بارش ہو جائے گی تو  پلان کینسل ہوگیا  پھر  دوسرے دن کا پلان بنا ۔ ہم سب دوسرے دن تیار ہوکر گھر سے چار بجے نکلے۔

 

 ایک آٹو والا بہت مشکل سے ملا ۔ اس کو راستہ نہیں معلوم تھا ابو سے بار بار پوچھ رہا تھا کہ یہا ں سے مڑو ں کہ وہا ں سے اتنا غصہ آرہا تھا۔

  آخرکار ہم سب کالے خاں پارک' شانتی استوپ ' پہنچ گے ہم  سب نے وہاں آنکھ مچولی کھیلا۔   جب میری باری آئی تو میں پریشان ہوگئی تھی  میں اپی کے بجائے  پاس بیٹھے کتے کے پاس جارہی تھی  سب نے مجھے بتایا تو میں بہت ڈر گئی ۔

 

nnnnnnnnnn.png

امی ابو کے پاس کچھ دیر بیٹھ گئی پھر ہم سب  کچھ کھانے کے  لیے نکلے وہا ں،  فوڈ کورٹ ہے ۔

 وہاں  تندوری کلچے کھائے مزے دار تھے پھر ہم شانتی استوپ  ٹیمپل  گئے وہا ں اوپر جاکر ہم نے  خوب  دوڑ بھاگ کی ۔ جب ہم وہاں سے واپس گھر کے لئے نکل رہے تھے اس سے پہلے  ابو نے کچھ باتیں بتائیں ۔ انہوں نے بتایا کہ  پہلے یہ زمین مسلمانوں کی تھی یہاں قبرستان تھا لیکن اس پر  سرکاری قبضہ کر لیاگیا اور یہ استوپ بنا دیا گیا ہے ۔

unnamed (6).jpg

اور یہ گارڈن بھی جو کا لے خا ں پارک کے نام سے جانا جاتا ہے  یہ سب  مسلم قبرستان  ہے ۔ اس کے بعد جب ہم  وہا ں سے نکل رہے تھے تو سب نے   آٹو سے آتے وقت کی اپنی اپنی  پریشانیا ں بتائیں ،ہم نے بتایا کہ بڑی مشکل سے آئے ہیں آٹو میں بیٹھ نہیں پا رہے تھے ۔

  ابو نے سوچا کہ 'اولا گاڑی' بک کیا جائے ۔ ہم سب اولا گاڑی میں بیٹھے اس میں اے ۔سی تھی،  اس گاڑی میں کچھ پریشانی نہیں ہوئی اور ڈرائیور انکل بھی اچھے تھے اللہ کے شکر سے ہم سب ہنسی خوشی گھر آگئے۔ 

سمیہ

درجہ ، پنجم۔   ملی ماڈل اسکول ، نئی دہلی


Tag سمیہ ، ملی ماڈل اسکول ، ملینیم پارک ، اندر پرستھ پارک ، کالے خاں پارک



دیگر خبروں

2
3
4