28/07/2017


کینسر کے مرض میں مبتلا ہندو بچی کے علاج کے لیے مسلم نوجوان افطار بیچ کر پیسہ جمع کر رہے ہیں

بنگلور: بنگلور واقع بینسن ٹاؤن ایسوسی ایشن کے رکن بلڈ کینسر سے متاثرہ ایک ہندو بچی کے علاج کے لیے 16 لاکھ روپے جمع کرنے کے لئے ایک مختلف طرح کی مہم چلا رہے ہیں۔

ان نوجوانوں نے رمضان کے پہلے دن سے ہی بےنسن ٹاؤن علاقے کی مسجد کے پاس روذےدارو کی طرف سے افطار کھائی جانے والی چیزوں کا ایک اسٹال لگایا ہے۔ یہ اسٹال روز شام کو 5۔30 بجے روز نئے نئے گرم، شہوت انگیز گرم، شہوت انگیز لجيذ پکوانوں کے ساتھ شروع ہوتا ہے۔

اس  کی فروخت ایسوسی ایشن سے منسلک نوجوان کرتے ہیں۔ پکوان بنانے کی ذمہ داری خواتین ارکان نے اٹھا رکھی ہے۔ وہ پاس کے ایک بیسمینٹ میں ڈش تیار کرتی ہیں۔

خرم شریف اور دوسرے نوجوان اسٹال کو سنبھالتے ہیں۔ افطار کے وقت یہاں اچھی خاصی بھیڑ ہو جاتی ہے۔ کافی تعداد میں لوگ یہاں خریداری کرنے پہنچ جاتے ہیں۔

ادارے کی رکن فرح خان ایک اسکول میں مشیر ہیں۔ اس بچی کی ماں اسی اسکول میں ملازم  ہے بچی کے والد نہیں ہیں۔

فرح کو جب بچی کی بیماری کے بارے میں پتہ چلا تو انہیں اس کے علاج میں مدد کا یہ طریقہ اچھا لگا۔ ڈش تیار کرنے کا کام فرح اپنی دیگر ساتھیوں، نمرا خان، سارا یاسین وغیرہ کی مدد سے کرتی ہیں۔

ایسوسی ایشن کے خرم شریف کہتے ہیں کہ ہم اس کی مدد کے لیے چندہ بھی کر سکتے تھے، لیکن ہمیں یہ راستہ اچھا لگا۔ ایسوسی ایشن میں تمام پڑھے لکھے نوجوان ہیں۔ انہیں امید ہے کہ ان کی کوشش سے وہ بچی ٹھیک ہو سکے گی۔

بہ شکریہ بیانڈ ہیڈ لائنس ڈاٹ ان 





دیگر خبروں

2
3
4